950true dots bottomright 300true true 800http://www.murshidhussain.com/wp-content/plugins/thethe-image-slider/style/skins/frame-white
  • 9000 random false 60 bottom 0 https://www.facebook.com/murshid.hussain.7315?pnref=story
     Slide6
  • 5000 random false 60 bottom 0 https://www.facebook.com/murshid.hussain.7315?pnref=story
     Slide2
  • 5000 random false 60 bottom 0 https://www.facebook.com/murshid.hussain.7315?pnref=story
     Slide4
?

اولیاء اللہ کی مہربانیاں

12684_305095339591231_1629400539_n

میرے مرشد کریم حضرت قبلہ سید غلام حسین شاہ بخاری مدظلہ العالی شہنشاہ ولایت ، غوث الاعظم ، مجدد ِ دوراں کہ جن سے فیض حاصل کرنے والوں میں اولیاء ، علماء اور عام لوگ شامل ہیں کہ ہر وقت حضرت قبلہ کی درگاہ ِ عالیہ پر میلے کا سا سماء بندھا رہتا ہے۔ میں نے تو یہی دیکھا ہے کہ حضرت کے ہاں دو بہر ہمہ وقت جاری ہیں ایک شریعت کا اور دوسرا طریقت کا اور جو جس طلب میں وہاں جاتا ہے سب پاتا ہے۔تقوہ اور عاجزی میں آپ کا کوئی ثانی نہیں اس دور میں اور اگر میں یہ کہوں کے آپ امام المتقین ہیں تو یہ بے شک کہنا حق ہی ہے ۔ آپ کی شان تو آپ کو دیکھنے ہی سے ظاہر ہوجاتی ہے کہ اس قدر آپ کے چہرے پر نورانیت ہے کہ گویا نور کی مانند آفتاب روشن ہو۔ایک شیخ الحدیث سے میری ملاقات مدینہ منورہ پاک میں مسجد نبوی ﷺ کے اندر ہوئی تو میں نے جناب سے پوچھا کہ ہمارے مرشد کریم بھی یہاں آج کل تشریف فرما ہیں کیا آپ کی ملاقات ہوئی اُن سے ؟ تو فرمانے لگے کہ ابھی کچھ لمحے پہلے ہی ہوئی تھی اور میں بہت خوش ہوں ۔ انکے چہرے پر خوشی کہ آسار جھلک رہے تھے اور مسکراتے ہوئے اور جوش و جزبے کے ساتھ بتانے لگے کہ آپ کے مرشد کے چہرے میں اللہ نے ناجانے کیا شان پوشیدہ رکھی ہے کہ جو انکو دیکھتا ہے دیکھتا ہی رہ جاتا ہے ۔ سبحان اللہ۔

سن ۲۰۱۲ کے مارچ کے مہینے میں میرے ساتھ ایک بہت ہی عالیشان کرامت پیش آئی وہ آپ کو بھی سناتا ہوں ۔ مارچ کے مہینے میں حضرت قبلہ مرشد کریم عمرےکے لیئے روانہ ہوئے تو میری بہت کوشش تھی کہ میں بھی حضرت کے ساتھ وہاں کی حاضری کاشرف حاصل کروں چناچہ میں نے ہر ممکن کوشش کر کے عمرے کا ویزہ حاصل کرلیا اور آخر کار میں عمرہ کر کے دوسرے دن ہی مدینے کا مسافر بن گیا ۔ دوپہر کو میں کھانا کھا کر ایک دوست کی مدد سے ایک کار میں سوار ہوا جو کہ سواری کے حساب سے لوگوں کو مدینہ لے کر جاتے ہیں اور ہمارا سفر شروع ہوا جب میں مدینے پہنچا تو وہ لوگ سیدھے مسجد نبوی ﷺ کی طرف جانے لگے تو میرے دل میں خیال آیا کہ پہلے حضرت سائیں مرشد کریم کے ہوٹل جا کر ان کے ساتھ حاضر ی کا شرف حاصل کروں۔ تو میں مسجد سے کچھ پہلے ہی کار سے اُتر گیا اور میں نے اُترتے ہی واپس پلٹا اور بنگالی پاڑے کی جانب روانہ ہوا ۔ ابھی روڈ کراس کر کے جیسے ہی میں فوٹپاتھ پر پہنچا تو ایک شخص کھڑا تھا جو مجھ سے پوچھنے لگا کہ بھائی آپ کو ہوٹل چاہیے تو میں نے کہا نہیں تو کہنے لگا کہ سستا ہوٹل دلوادیتا ہوں میں نے کہا مجھے نہیں چاہیے تو کہنے لگا کس کو تلا ش کررہے ہو میں نے کہا میں اپنے مرشد کو تلاش کر رہا ہوں ۔ اس پر اُس نے دوبارہ پوچھا کیا آپ سائیں قمبر والے کو تلاش کر رہے ہو؟ میں خوش اور حیران ہوگیا کہ جی بھائی میں اُنہیں کو تلاش کرنے نِکلا ہوں تو کہنے لگا کہ میں آپ کو بتاتا ہوں کہ وہ کہاں ٹھرے ہوئے ہیں پھر تھوڑا آگے چل کر کہتا ہے کہ وہ سامنے جو ہوٹل ہے اس میں ٹھرے ہوئے ہیں قبلہ حضرت سائیں۔ میں بہت خوش ہوگیا کہ پچھلی بار تو بہت تلاش کرنا پڑھا تھا لیکن اب کی بار تو بہت آسانی سے مل گیا۔بڑی مہربانی ہوگئی مجھ پر ۔

      چناچہ میں چلتے چلتے جب وہاں پہنچا تو جیسے ہی میں پارکنگ کے راستے ہوٹل میں داخل ہوا تو کیا دیکھتا ہوں حضرت سائیں باہر تشریف لا رہے ہیں ۔ میں نے بڑھ کر حضرت سائیں کے قدم چھوئے اور دست مبارک کا بوسا لیا تو حضرت سائیں نے میرے چہرے پر بوسا دیا اور فرمایا کہ بیٹا آپ ہمارے ساتھ ہی رہو تو میں خوش ہوگیا اور انہوں نے فرمایا جاؤ اپنا سامان رکھ کر آؤ ہم نماز کے لیے جارہے ہیں میں نے فوراً تیاری کی اور حضرت سائیں کے ساتھ مسجد روانہ ہوگیا ۔ نماز ادا کرنے سے پہلے حضرت تشریف فرما تھے کہ مجھے اپنے پاس بُلایا اور پوچھا کہ یہ بتاؤ آپ کو کس نے بتایا کہ میں اس ہوٹل میں ٹھرا ہوا ہوں تو میری آنکھوں میں آنسو آگئے اور میں نے پوری بات بتائی تو حضرت انتہائی مسرت اور مہربانی کے انداز میں مسکرائے اور میرے دل میں یہ بات روشن فرمادی اور میرا دل گواہی دینے لگا کہ یہ تو حضرت نے ہی بندہ کھڑا کیا تھا اپنے اس گناہگار غلام کے لیئے۔ سبحان اللہ کیا شان ہے میرے مرشد کی کہ ہر جگہ اور ہروقت اپنے غلاموں پر نظر فرماتے ہیں اور ہر مشکل میں دستگیری فرماتے ہیں۔

خدا کی قسم اللہ نے ہمیں اپنے ایسے دوست سے ملا دیا ہے کہ ہر فقیر اپنے مرشد کی کرامات کا مشاہدہ کر کے یقین کی بلندیوں پر پہنچا ہے اور ایک بات جو میں ہمیشہ کہتا ہوں کہ علماء جو سابقہ زمانے کے اولیاء کی کرامات ممبر وں پر بیٹھ کر بیان کرتے ہیں اللہ کے جلال کی قسم ہم اپنی آنکھوں سے دیکھتے ہیں۔ ان کا یقین صرف علم تک محدود ہے اور ہم ظاہری طور پر مشاہدہ کرتے ہیں۔
کچھ لوگ اپنے مرشد کے بارے میں صرف کرامات بیان کرتے ہیں لیکن ان میں سے اکثریت نے کبھی کرامات کو دیکھا نہیں ہوتا اور اس در کی کیا بات ہے کہ کوئی بھی ایسا نہیں ملے گا جس نے خود کرامت کا مشاہدہ نہ کیا ہو۔

One Response to “اولیاء اللہ کی مہربانیاں”

Leave a Reply

Enable Google Transliteration.(To type in English, press Ctrl+g)